Killing for honor by the honorables.

پاکستان میں عورت سے بات کرنا یا عورت پہ بات کرنا، دونوں بہت گھمبیر مسئلے بن چکے ہیں۔ چاہے شرمین عبید ہو یا ماروی سرمد یا شیریں مزاری یا عظمیٰ بخاری۔ مد مقابل کوئی مولوی حمداللہ، کوئی مفتی نعیم، کوئی خواجہ آصف، کوئی بھی ایسا شخص بیٹھا ہوا ہوتا ہے جس کو عورت کی عزت کرنا تو کیا عورت سے بات کرنا بھی نہ آتا ہوگا۔ حیف کہ ٹی وی پہ اور سوشل میڈیا پہ یہ تمام مغلظات بکے جا رہے ہوتے ہیں اور پیمرا کے کان پہ جوں نہیں رینگتی۔

To read more please click on this link:

 

غیرت کے نام پر…. ’میرے قاتل، میرے دلدار

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s